11 نومبر کو فرد جرم عائد ہوگی

عدالت نے ملزمان کو فرد جرم عائد کرنے کیلئے گیارہ نومبر کو طلب کرلیا،، عدالت نے دونوں کے جوڈیشل ریمانڈ میں بھی توسیع کردی ،، ڈی جی نیب نے جیل میں ٹرائل سے متعلق رپورٹ بھی جمع کرا دی، ، شہباز شریف کی جیل میں سہولیات کی استدعا پر فیصلہ محفوظ کرلیا
لاہور کی احتساب عدالت میں منی لانڈرنگ ریفرنس کی سماعت،عدالت نے شہباز شریف سمیت دیگر نامزد ملزمان کو فردجرم
کی کارروائی کیلئے 11 نومبر کو طلب کرلیا ،دوران سماعت جیل ٹرائل سے متعلق ڈی جی نیب نے رپورٹ جمع کرائی، نیب نے جیل میں ٹرائل پر رضا مندی ظاہر کردی، رپورٹ میں کہا گیا ،کسی بھی کیس کا جیل میں ٹرائل کرنا عدالت کا صوابدیدی اختیار ہے،اپوزیشن لیڈر شہباز شریف نے عدالت کو جیل میں پیش آنے والی مشکلات سے آگاہ کیا،دلائل دیتے بتایا، کمر درد کا مریض ہوں، طبی سہولیات فراہم نہیں کی جا رہیں،عدالت آتے ہوئے بکتر بند گاڑی میں لیٹ کر آیا، عدالت سے قانون کے مطابق انسانی حقوق کی پامالی پر مناسب احکامات جاری کرنے کی استدعا کی۔عدالت سے واپسی پر میڈیا سے گفتگو کا موقع پر ملا تو،، شہباز شریف نےصرف اتنا ہی کہا، ظلم کی انتہا ہے۔عدالت نے شہباز شریف کی استدعا پر فیصلہ محفوظ کرتے ہوئے سماعت 11 نومبر تک ملتوی کر دی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں